Surveillance
Self-Defense

مضبوط پاس ورڈز کی تخلیق

آخری تازہ کاری: 
10-29-2018
اس صفحے کا ترجمہ انگریزی زبان سے کیا گیا ہے، انگریزی ورژن میں شاید تجدید ہوچکی ہو۔
 

پاس ورڈ منیجر کے استعمال سے مضبوط پاس ورڈز کی تخلیق Anchor link

پاس ورڈز کا باربار استعمال نہایت ہی برا عمل ہے۔ اگر کسی برے انسان کے ہاتھ آپ کا وہ پاس ورڈ لگ جائے جس کو آپ نے کئی جگہوں پر ایک جیسا ہی لگا رکھا ہو تو وہ غلط شخص آپ کے ایک نہیں بلکہ کئی اکاؤنٹس تک رسائی حاصل کر سکتا ہے۔ اسی لئے مختلف ، منفرد اور مضبوط پاس ورڈز کا آپ کے پاس ہونا بہت ضروری ہے۔

خوش قسمتی سے پاس ورڈ منیجر اس زمرے میں آپ کی مدد کرسکتا ہے۔ پاس ورڈ منیجر ایک ایسا ٹول ہے جو جو نہ صرف پاس ورڈز تخلیق کرتا ہے بلکہ انہیں آپ کیلئے آپ کے لئے محفوظ بھی رکھتا ہےتاکہ آپ کو مختلف سائٹس اور سروسز کیلئے ان پاس ورڈز کو یاد رکھنے کی ضرورت نہ پڑے۔ پاس ورڈ منیجرز:

  • ایسے مضبوط پاس ورڈز تخلیق کرتے ہیں کہ کوئی بھی انسان اس کا اندازہ نہ لگا سکے۔
  • کئی پاس ورڈز محفوظ کرلیتے ہیں (اور حفاظتی سوالات کے حفاظتی جوابات دیتے ہیں)۔

  • ایک ہی ماسٹر پاس ورڈ (یا پاس فریز سے) سے آپ کے تمام پاس ورڈز کی حفاظت کرتے ہیں۔۔

KeePassXC پاس ورڈ منیجر کی ایک مثال ہے جو کہ آسان اور آزاد رسائی کی حامل ہے۔ آپ اس ٹول کو اپنے ڈیسک ٹاپ رکھ سکتے ہیں یا اپنے ویب براؤزر میں ضم کر سکتے ہیں۔ KeePassXC ان تبدیلیوں کو خود کار طریقے سے محفوظ نہیں کرتا جو آپ اس ٹول کو استعمال میں لا کر کرتے ہیں، اس لئے آپ اگر کچھ پاس ورڈز شامل کرلیتے ہیں اور بعد میں یہ ٹول کریش کر جائے تو آپ ان پاس ورڈز کو ہمیشہ کیلئے کھو سکتے ہیں۔ آپ اسے سیٹنگز میں جا کر تبدیل کر سکتے ہیں۔

حیرانی ہورہی ہے کہ آیا ایک پاس ورڈ منیجر آپ کیلئے صحیح ٹول ہے؟ یہ جان لیجئے کہ اگر کوئی طاقتور مخالف جیسے کوئی ریاست آپ کو نشانہ بناتی ہے تو شائد یہ ٹول آپ کو نہ بچا سکے۔

یاد رکھئے؛

  • پاس ورڈ منیجر کا استعمال کسی ناکامی کا باعث بھی بنتا ہے۔

  • پاس ورڈ منیجرز مخالفین کیلئے ایک صریح ہدف ہوتے ہیں۔

  • تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ بہت سے پاس ورڈ منیجرز کمزوریوں کے حامل ہوتے ہیں۔

اگر آپ عمدہ قسم کے ڈیجیٹل حملوں کی بابت پریشان ہیں تو کسی نسبتاً کم درجہ تکنیک پر غور کریں۔ آپ دستی طور پر محفوظ پاس ورڈز کی تخلیق کر سکتے ہیں (نیچے دیکھئے ’’ ڈائس کے استعمال سے محفوظ پاس ورڈز کی تخلیق‘‘)، انہیں کاغذ پر تحریر کیجئے اور پھر انہیں کہیں محفوظ کرلیجئے۔

ٹھہریئے، کیا ایسا ممکن ہے کہ پاس ورڈز کو ذہن نشین کرلیا جائے اور انہیں لکھنے کی نوبت نہ آئے؟دراصل انہیں لکھ لینا اور انہیں اپنے پرس جیسی جگہ محفوظ کرلینا زیادہ کار آمد ہے اس کم از کم یہ ہوگا کہ وہ تحریر شدہ پاس ورڈز کے چوری ہونے یا کھو جانے کا تو آپ کو پتہ چل ہی جائے گا۔

 

ڈائس کے استعمال سے مضبوط پاس ورڈز کی تخلیق Anchor link

ایسے کم ہی مضبوط پاس ورڈز ہوتے ہیں جو یاد رہ جاتے ہیں لیکن پاس ورڈز کو زیادہ مضبوط ہونا چاہئے ۔ پاس ورڈز میں شامل ہوتے ہیں؛

پاس ورڈ منتخب کرتے وقت لوگوں کو جن مسائل کا سامنا ہوتا وہ ہیں غیر معروف اور اندازہ لگانے کیلئے مشکل۔ پاس ورڈز کے انتخاب میں لوگ کچھ خیال نہیں رکھتے۔مضبوط اور یاد رہنے والے پاس ورڈکی مد میں ڈائس اور ایک الفاظ کی ترتیب کا استعمال بے ترتیب الفاظ کے چناؤ میں ایک مؤثر اور بہترین طریقہ ہے۔ یہ الفا مل کر آپ کیلئے پاس فریز مرتب کرتے ہیں۔ پاس فریز ، پاس ورڈ کی وہ قسم ہوتی ہے جو مزید دفاع کا کام کرتی ہے۔ ڈِسک اینکرپشن اور اپنے پاس ورڈ منیجر کیلئے ہم آپ کو تجویز دیتے ہیں کہ کم از کم چھ الفاظ کا انتخاب کریں۔

کم از کم چھ الفاظ ہی کیوں استعمال کرنے چاہئیں؟ بے ترتیب فریز حاصل کرنے کیلئے ڈائس کا استعمال ہی کیاں ہونا چاہئے؟ پاس ورڈ جتنا زیادہ طویل اور جتنے زیادہ بے ترتیب الفاظ پر محیط ہوگا، کسی دوسرے کمپیوٹر اور انسان کیلئے اس کا اندازہ لگانا اتنا ہی مشکل ہوگا۔ یہ جاننے کیلئے کہ آپ کو اتنے طویل اور ہے ایک اندازہ پاس ورڈ کی ضرورت کیوں ہے تو یہاں ایک ویڈیو کلپ دیکھئے۔

EFF کی جانب سے مرتب کردہ الفاظ کی تفصیل کو استعمال کر کے ایک پاس فریز بنانے کی کوشش کریں۔

اگر آپ کے کمپیوٹر یا ڈیوائس کو ناکارہ بنادیا جائے اور سپائے ویئر انسٹال ہو جائے تو سپائے ویئر آپ کے ماسٹر پاس ورڈ ٹائپ کرتے ہوئے آپ پر نظر رکھ سکتا ہے اور پاس ورڈ منیجر کی تفصیلات چرا سکتے ہیں۔ لہٰذا پاس ورڈ منیجر استعمال کرتے ہوئے آپ کیلئے ضروری ہے کہ آپ اپنے کمپیوٹر اور دیگر ڈیوائسز کو مالویئر سے صاف کریں۔

 

حفاظتی سوالات سے متعلق چند الفاظ Anchor link

حفاظتی سوالات’’ سے متعلق ہوشیار رہیں کہ ویب سائٹس آپ کی شناخت کی تصدیق کرتی رہتی ہیں۔ ان سوالات کے صحیح جوابات اکثر عوامی سطح پر سامنے آجانے سے کوئی بھی موقع پرست دشمن اسے آسانی سے تلاش کرسکتا ہے اور آپ کے پاس ورڈ کو مکمل طور پر بائی پاس کرنے کیلئے اس کا استعمال کر سکتا ہے

بہتر یہی ہے کہ کوئی فرضی جواب تحریر کریں تاکہ کسی کو بھی آپ کا پتہ نہ چلے۔ مثلاً اگر حفاظتی سوال ہو کہ ؛

‘‘ آپ کے پہلے پالتو جانور کا نام کیا تھا؟’’

آپ کا جواب آپ کے پاس ورڈ منیجر سے تخلیق شدہ کوئی بے ترتیب سا پاس ورڈ ہونا چاہئے۔ آپ ایسے فرضی جوابات کو اپنے پاس ورڈ منیجر میں محفوظ بھی کر سکتے ہیں۔

ان سائٹس کےبارے میں غور کریں جہاں آپ نے حفاظتی سوالات کا استعمال کیا ہو اور اپنے جوابات کی تبدیلی پر بھی غور کریں۔ ایک ہی پاس ورڈ یا ایک جیسے حفاظتی سوالات کا استعمال مختلف ویب سائٹس یا سروسز جیسے ایک سے زیادہ اکاؤنٹ کیلئے مت کریں۔

 

کئی ڈیوائسز کے مابین اپنے پاس ورڈز کا ملاپ کروانا Anchor link

بہت سے پاس ورڈ منیجر ایک پاس ورڈ سِنکرونائزنگ فیچر کے ذریعے آپ کے پاس ورڈز تک آپ کو رسائی حاصل کرنے کی اجازت دے دیتے ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ جب آپ اپنی پاس ورڈ فائل کا کسی ڈیوائس سے ہم آہنگ کریں گے تو یہ آپ کی ہر ڈیوائس پہ اپ ڈیٹ ہو گی۔

پاس ورڈ منیجر آپ کے پاس ورڈز کو کلاؤڈ میں محفوظ کرسکتے ہیں، مطلب یہ کہ خودکار سرور پہ مرموز ہو جاتے ہیں۔ جب آپ کو اپنے پاس ورڈ کی ضرورت ہوگی تو یہ منیجرز خود بخود بحال ہو کر پاس ورڈز کو ڈی کرِپٹ کر دیں گے۔پاس ورڈ منیجرز بہت تسلی بخش ہوتے ہیں جو کہ آپ کے پاس ورڈ کو محفوظ اور سِنکرونائز کرنے میں مدد دیتے ہیں، لیکن اس کے ساتھ ہی حملوں کی صورت میں خاصے غیر محفوظ ثابت ہوتے ہیں۔ اگر آپ کے پاس ورڈز آپ کے کمپیوٹر اور کلاؤڈ دونوں میں موجود ہوتے ہیں تو کسی حملہ آور کو آپ کے پاس ورڈ کو ڈھونڈھنے کیلئےآپ کے کمپیوٹر پر قبضہ کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی (بلکہ انہیں آپ کے پاس ورڈ منیجر کے پاس فریز کو توڑنے کی ضرورت ہو گی)۔

تشویش کی صورت میں اپنے پاس ورڈز کو کلاؤڈ سے ہم آہنگ مت کریں بلکہ صرف اپنی ڈیوائسز میں محفوظ کرلیں۔

صورتِحال کو مدِ نظر رکھتے ہوئے اپنے پاس ورڈ ڈیٹا بیس کا ایک بیک اپ رکھیں۔اگر آپ اپنا پاس ورڈ ڈیٹا بیس کسی حادثے کی صورت میں کھو بیٹھتے ہیں یا آپ کی ڈیوائس آپ سے دور کردی جاتی ہے تو پاس ورڈ ڈیٹا بیس کا بیک اَپ رکھنا کافی فائدہ مند ہے۔ پاس ورڈ منیجرز کے پاس عموماً بیک اپ فائل رکھنے کی صلاحیت موجود ہوتی ہے یا پھر آپ اپنا روزمرہ کے بیک اَپ پلان کا استعمال کر سکتے ہیں۔

 

ملٹی فیکٹر تصدیق اور وَن ٹائم پاس ورڈز Anchor link

مضبوط، منفرد پاس ورڈز کا ہونا برے کرداروں کیلئے آپ کے اکاؤنٹس تک رسائی حاصل کرنے میں مشکل کھڑی کر دیتے ہیں۔اپنے اکاؤنٹس کو مزید محفوظ کرے کیلئے ٹو فیکٹر تصدیق کو چلائیں۔

بعض سروسز ٹو فیکٹر تصدیق (جسے 2FA, ملٹی فیکٹر تصدیق یا ٹو سٹیپ ویری فکیشن بھی کہا جاتا ہے) مہیا کرتی ہیں جس کیلئے صارفین کو دو چیزوں کی ضرورت ہوتی ہے (پاس ورڈ اور سیکنڈ فیکٹر) تاکہ انہیں اپنے اکاؤنٹ تک رسائی حاصل ہو۔ سیکنڈ فیکٹر یا تو خفیہ کوڈز میں سے ہوسکتا ہے یا پھر موبائل ڈیوائس پر چلنے والے پروگرام کے ذریعے نکالا گیا کوئی نمبر ہو سکتا ہے۔

موبئل فون استعمال کرتے ہوئے ٹو فیکٹر تصدیق دو طریقوں میں سے کسی ایک طریقے سے ہو سکتا ہے؛

  • آپ کا فون سکیورٹی کوڈز بنانے والی کسی تصیقی ایپلی کیشن کو چلا سکتا ہے ( جیسا کہ Google Authenticator یا Authy) یا پھر آپ ایک اکیلی ھارڈویئر ڈیوائس (جیسا کہ YubiKey); یا
  • سروس آپ کو ایک ایس ایم ایس پیغام مزید سکیورٹی کوڈ کیساتھ بھیج سکتی ہے جس کی آپ کو لاگ اِن ہونے کیلئے ٹائپ کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔

اگر آپ کے پاس انتخاب کا اختیار ہو تو پیغام کے ذریعے ملنے والے کوڈز کی بجائے تصدیقی ایپلی کیشن یا کسی اکیلی ہارڈ ویئر ڈیوائس پر انحصار کریں۔ اتھینٹی کیٹر ( تصدیقی) کو بائی پاس کرنے کی نسبت ان کوڈز (ایس ایم ایس کے ذریعے ملنے والے ) کو دوبارہ ترتیب دینا ایک حملہ آور کیلئے قدرے آسان ہوتا ہے۔

Google جیسی بعض سروسز بھی آپ کو وَن ٹائم پاس ورڈز جنہیں ایک بار کے استعمال کیلئے پاس ورڈز بھی کہا جاتا ہے، کی ایک تفصیل مرتب کرنے دیتی ہیں۔ آپ کو ان کا پرنٹ یا کاغذ پہ تحریر کر کے لکھنا پڑتا ہے۔ ان میں سے ہر ایک پاس ورڈ صرف ایک بار کام کرتا ہے، لہٰذا جب آپ اس پاس ورڈ کو داخل کرتے ہیں اور اگر کوئی اسے چرا لے تو وہ پاس ورد اس چور کیلئے دوبارہ کار آمد نہیں رہے گا۔

اگر آپ یا آپ کا ادارہ اپنے خود کے بنیادی مواصلاتی ڈھانچے کا استعمال کرتے ہیں تو چند ایک مفت رسائی والے سافٹ ویئر بھی وہاں دستیاب ہوتے ہیں جنہیں ٹو فیکٹر تصدیق کیلئے استعمال کیا جاسکتا ہے تاکہ آپ اپنے سسٹمز تک رسائی حاصل کر سکیں۔ ان سافٹ ویئرز پہ نظر رکھیں جو اوپن سٹینڈرڈ "Time-Based One-Time Passwords" یا RFC 6238فراہم کرتے ہیں۔

 

بعض اوقات آپ کو اپنے پاس ورڈ کو آشکار کرنے کی ضرورت ہوگی Anchor link

پاس ورڈز کو آشکار کرنے سے متعلق قوانین کا اطلاق ہر جگہ مختلف ہوتا ہے۔ بعض مقامات پر آپ کے پاس ورڈ کیلئے کی گئی مانگ کو آپ قانونی طور پر چیلنج کر سکتے ہیں جبکہ دیگر علاقوں میں مقامی قوانین حکومت کو یہ اجازت دیتے ہیں کہ وہ انکشاف کرنے کی مانگ کریں اور یہاں تک کہ اس شک کی بنا پر آپ کو قید کی سزا بھی دی جا سکتی ہے کہ کہیں آپ پاس ورڈ یا key کو جانتے ہیں۔ جسمانی نقصان پہنچانے کی دھمکیاں دے کر بھی کسی کو مجبور کیا جاسکتا ہے کہ وہ اپنا پاس ورڈ ظاہر کردے۔ یا پھر آپ ایسے حالات میں ہوں کہ اگر حکام آپ سے پاس ورڈ کا مطالبہ کریں یا ڈیوائس اَن لاک کرنے کو کہیں جیسے کسی دوسرے ملک کی سرحد پہ سفر کے دوران جہاں وہ آپ کو تاخیر کا شکار کردیں یا آپ کی ڈیوائس آپ سے لے لیں۔

ہماری ایک علیحدہ سے گائیڈ برائے امریکی سرحد میں داخلہ یا اخراج موجود ہے جو آپ کو مشاورت دیتی ہے کہ جب آپ امریکہ کے اندر یا باہر سفر کر رہے ہوں تو ڈیوائس تک رسائی کی مانگ سے کیسے نبرد آزما ہونا ہے۔ بصورتِ دیگر آپ کو خود دیکھنا ہے کہ موقع کی مناسبت سے کیا کرنا چاہئے جب کوئی آپ سے زبردستی پاس ورڈ کی مانگ کرے۔

JavaScript license information